(5)کتاب المصاحف اور مقدمہ آرتھر جیفری کا تنقیدی و اختصاصی مطالعہ+A special and critical study of the Book of Musahif and Prolegomena of Arthur Jeffory

  • Dr. Muhammad Munir Azhar+ Dr. Hafiz Hamid Hammad+Hafiz Abdul Azeem

Abstract

The Holy Quran is based on the greatest and noblest literature. The arrangement, collection, narration and science of recitation of holy Quran is the basic kinds of Quranic literature. Much has been written about these topics. ``kitab -ul-masahif``by Ibne Abi Dawood is one of important books written in this era. This book is written according method of Muhaddseen and discusses about the narrations and collections of Quran from the followers of the Holy Prophet. It also talks about the pattern of compilers. Based on correct and fruitful knowledge. Although some unauthentic narrations are also presented in this book. That is the reason of preference to this book by some verifiers or orientalists. This article is a well step to give a complete introduction of this important source of knowledge.

References

1. ابن عدي؛ عبد الله بن عدي الجرجاني (م 365ھ)، الكامل في ضعفاء الرجال 4/265، دار الفكر، بيروت، طبع سوم، سال 1988
2. ذهبي؛ شمس الدين محمد بن أحمد بن عثمان(م 748ھ)، سير أعلام النبلاء 13/222، مؤسسة الرسالة
3. واعظ، عبد السبحان،تحقیق کتاب المصاحف، ص:۳۶ تا ۴۱، دار البشائر الاسلامیہ، طبع اول، ۱۹۹۵
4. خطیب، ابو بکر، تاریخ بغداد۱۲/34 ، مكتبه خانجي، قاهره۔
5. ذہبیِ، میزان الاعتدال ۶/۴۳۔
6. الاثری، ابو عبداللہ ،ریدان، جامع شروح المنظومیۃ الحائیۃ ،ص: 2
7. امام ابوبکر سے یہ قول ابن بطہ نے نقل فرمایا ہے، دیکھئے: ابن أبی یعلی ،طبقات الحنابلہ ۲/۵۲۔ ،ِاور ذہبی ،السیر 13 /۲۳۳۔
8. خطيب بغدادي ، تاريخ بغداد 9/465۔
9. حواله مذكوره.
10. حواله مذكوره 13/227.
11. ابن عدي، الكامل فی الضعفا 4/256و266.
12. حواله مذكوره.
13. حواله مذكوره.
14. حواله مذكوره
15. ذہبیِ،سیر 14/505۔
16. ایضا 13/225،231۔
17. حافظ ابن حجر عسقلانی نے تقریب التہذیب میں ان کو ثقہ کہا ہے،ابن حبان نے اسے ثقات میں ذکر کیا ہے اور امام نسائی نے اس سے ایک عالی روایت لی ہے۔
18. ذہبیِ،سیر 13/225،231۔
19. معلمی ، عبد الرحمن بن یحیی ، التنکیل: 1/299، حدیث اکیڈمی فیصل آباد،1988م۔
20. احسان اللہ شاہ صاحب کا مکتبہ جو نیو سعید آباد سندھ کے مضافات میں ان کے گاوں میں واقع ہے۔
21. واعظ، عبد السبحان، کتاب المصاحف، ص:۹۰،۸۹ ۔
22. ابن حبان، محمد بن حبان، الثقات، رقم ۱۳
23. آرتھر جیفری، دکتور،مقدمہ کتاب المصاحف(مکتبہ رحمانیہ مصر، طبع اول:۱۹۳6م) ص: 4۔
24. حوالہ مذکورہ
25. حوالہ مذکورہ ص: ۵-6
26. ابن ندیم، الفہرست، ص: ۳۲۴، دار المعرفہ، بیروت۔
27. کحالہ، عمر رضا، معجم المولفین تراجم مصنفی الکتب العربیۃ: ۶/۶۰، دار احیاء التراث العربی، بیروت۔
28. حاجی خلیفہ ، مصطفی بن عبد اللہ، کشف الظنون عن أسامی الکتب والفنون ۲/۱۷۰۳۔
29. زرکلی، خیر الدین، الاعلام ۴/۹
30. ابن ابی داود، کتاب المصاحف، ص: ۱۰۱
31. ابن ابی داود، کتاب المصاحف، ص: 295
32. ابن ابی داود، کتاب المصاحف، ص: 298
33. ابن ابی داود، کتاب المصاحف، ص: ۱۰۱
34. علامہ دانی ،ابو عمرو عثمان بن سعید بن عمر الدانی الصیرفی کے نام سے مشہور ہیں ۔ ۳۷۱ھ میں دانیہ میں پیدا ہوئے۔ تاہم یاقوت حموی نے ان کےشاگرد سلیمان بن نجاح سے ۳۷۲ ھ کی ولادت کا تذکرہ کیا ہے۔ ان کی وفات ۴۴۴ ھ میں ہوئی ۔امام دانی رحمہ اللہ اپنے زمانے کے بہت بڑے عالم تھے،علم القرا ء ا ت میں ان کو سنگ میل کی حیثیت حاصل ہے ،انھوں نے قراء ا ت اور مصاحف کے حوالے سے بہت سی کتب لکھیں۔ ان میں سے ایک المقنع فی معرفۃ مرسوم مصاحفِ أھل الامصار ہے۔
35. کتاب المصاحف، حدیث (۳۲) ص:۱۶۲۔
36. ابن حبان۔ الثقات:۸/۳۶۸۔
37. مزی: جمال الدین ابو الحجاج بن یوسف32/261
38. ایضا : 27/180 ، ابن عدی، الکامل6/319 ، ابن حجر، التقریب ص:918۔
39. بخاری: محمد بن اسماعیل ، الجامع الصحیح ، حدیث نمبر (4986)۔
40. ابن ابی داود، کتاب المصاحف، حدیث (14) ص: 139۔
41. الدانی: ابو عمرو، المقنع ص: 13
42. تفصیل کیلئے دیکھئے: زرکشی، محمد بن عبد اللہ(م ۷۹۴ھ)، البرھان 1/233 اور سیوطی،جلال الدین عبد الرحمن بن ابی بکر، الاتقان 2/377
43. ابن ابی داود، کتاب المصاحف، حدیث نمبر ( 34) ص: 173
44. مزی: جمال الدین ابو الحجاج بن یوسف ، تھذیب الکمال۳/42۔
45. ابن حجر، التقریب ص:1025۔
46. ایضا ، ص: 757۔
47. ابن حجر، التقریب ص: 535 ، مزی: جمال الدین ابو الحجاج بن یوسف 15/431۔
48. بخاری: محمد بن اسماعیل ، الجامع الصحیح ، حدیث نمبر (3506)۔
49. الدانی: ابو عمرو، المقنع ص:142،143۔
50. ابن ابی داود، کتاب المصاحف، حدیث نمبر ( 44) ص: 172
51. ابن حجر، التقریب ص: 90.
52. ابن حجر، التقریب ص: 601.
53. ابن عساکر: علی بن حسن بن ہبۃ اللہ ، تاریخ دمشق 39/250۔
54. بغوی: حسین بن مسعود (متوفی 516)، شرح السنۃ 4/525۔
55. الدانی: ابو عمرو، المقنع ص:156،157۔
Published
2020-07-09
Section
Articles